344

ایک بوڑھا شخص ٹرین میں سفر کر رہا تھا ،

ایک بوڑھا شخص ٹرین میں سفر کر رہا تھا ، اتفاقا. کوچ خالی تھا۔ پھر 8-10 لڑکے اس کوچ میں آئے اور بیٹھ کر تفریح ​​کرنی شروع کر دی ۔
ایک نے کہا – “آؤ ، زنجیر کھینچیں”۔ ایک اور نے کہا – ” اس جرم پر 500 روپے جرمانہ اور 6 ماہ قید کی سزا لکھی ہے۔
” تیسرے نے کہا – ” ہم بہت سارے لوگ ہیں 500 روپے چنده کرکے جمع کروا دیں گے۔
” چندہ جمع کیا گیا تو 500 کی بجائے 1200 روپے جمع ہوگئے۔ جس میں 500کاایک نوٹ ، پچاس کے 2 نوٹ باقی سب 100 کے نوٹ تھے۔
چندہ پہلے لڑکے نے جیب میں رکھ لیا ۔
“زنجیر کھینچنے سے پہلے ایک بولا اگر کوئی پوچھے گا تو کہیں دینگے گے کہ بوڑھے نے اسے کھینچا تھا ۔ تب اپنے کو پیسہ بھی نہیں دینا پڑے گا۔ اور ان روپیوں سے پارٹی کریں گے ۔
“بوڑھے نے ہاتھ جوڑ کر کہا ، “بچوں ، میں نے آپ کے ساتھ کیا غلط کیا ہے ، آپ مجھے کیوں پھنسا رہے ہیں؟”
لیکن وہ نہیں مانے اور زنجیر کھینچ لی گئی۔ جیسی امید تھی
ٹی ٹی کانسٹیبل کے ساتھ آیا ، لڑکوں نے ایک آواز میں کہا ، کہ اس بوڑھے نے زنجیر کھینچی ہے۔” ٹی ٹی نے بوڑھے سے کہا ،
“آپ کو اس عمر میں ایسا کام کرنے میں شرم نہیں آئی ؟
” ہاتھ جوڑ کر بوڑھے نے کہا ، “جناب ، میں نے زنجیر کھینچی ہے ، لیکن میں بہت بے بس تھا۔” اُنہوں نے پوچھا ایسی کیا مجبوری تھی؟
بوڑھے نے کہا ، “میرے پاس صرف 1200 روپے تھے ، جو ان لڑکوں نے چھین لئے اور اس پہلے لڑکے نے اپنی جیب میں رکھے ہوئے ہیں ۔” اس میں 500 کا ایک نوٹ ، پچاس کے 2 نوٹ اور باقی سب 100 کے نوٹ ہیں۔
اب ٹی ٹی نے کانسٹیبل سے کہا ، “ان کی تلاشی لو”
جیسا اس بوڑھے نے بتایا تھا اس لڑکے کی جیب سے 1200 روپے اُسی ترتیب ہیں برآمد ہوئے ، جو بوڑھے کو واپس کردیئے گئے اور لڑکوں کو اگلے اسٹیشن میں پولیس کے حوالے کردیا گیا۔
پولیس کے ساتھ جاتے ہوئے لڑکوں نے بوڑھے کو گھورا ، تو بوڑھے نے اپنی سفید داڑھی پر ہاتھ پھیرتے ہوئے کہا – “ بیٹا جی ، یہ بال ایسے ہی سفید نہیں ہوئے ہیں ! “ 😂

منقول اِبنِ منقول ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں